Sunday, 22 April 2012

PARHAIZ E JILALI WA JAMALI

حسبِ وعدہ پرہیزِ جلالی جمالی پہ پوسٹ حاضرِ خدمت ہے۔ اسکو سمجھنا چنداں مشکل امر نہیں۔ صاحبِ علم اور صاحبِ عقل یقینا اس مضمون کی داد دیں گے۔

ہر وہ چیز جس کا ماخذ روح یا بو ہے ممنوع ہے

یہی پرہیز جلالی جمالی ہے اسی ایک جملہ میں قانون موجود ہے، اردو کی کتبِ عملیات میں پرہیزِ جلالی اور جمالی دو علیحدہ  علیحدہ  چیز سے موسوم ہیں ۔ یہ بالکل غلط ہے۔ روحانیات یا سفلیات میں جو پرہیز مطلوب ہیں وہ صومِ روحانی کہلاتے ہیں یعنی سپرچوئل فاسٹنگ اور یہ ایک ہی طرح سے ہیں جلالی یا جمالی علیحدہ کچھ نہیں ہوتے ۔ اور یہ چیز قبل از اسلام سے یہود اور عیسائی عاملین کام میں لاتے تھے اور یہ انجیل سے ثابت شدہ ہے [قبل از اسلام روزہ کی یہی کیفیت تھی تفصیل کیلیئے بائبل یا گوگل پہ سپرچوئل فاسٹنگ کی معلومات لی جا سکتی ہیں]۔ اب بھی عیسائی ہی سب سے زیادہ صومِ روحانی سے کام لیتے ہیں۔ اگر آپ عملیات کی کتب معتبرہ کا مطالعہ کریں تو یہ بات روزِ روشن کی طرح عیاں ہو جائے گی کہ پرہیز جلالی یا پرہیز جمالی دو علیحدہ علیحدہ چیزیں بالکل ہی نہیں۔ اردو کتب میں نقال اور جعلی عاملین نے اس قاعدہ کو بھی غلط اور بے ہودہ انداز میں پیش کیا۔ ایک طالب علم کو دو مختلف پرہیز بتائے اور اصل حقائق سے محروم ہی رکھا۔ حالاںکہ عملیات میں جو پرہیز یا صوم مطلوب ہے وہ اسی ایک جملہ میں موجود ہے۔ پرہیز جمالی بالکل ناقص ہے اسکا کرنا یا نا کرنا برابر ہے کیوںکہ اس پہ عمل کرنے سے اس متذکرہ جملہ کی شرائط پوری نہیں ہوتیں اور عمل میں ہمیشہ ہی ناکامی کا سامنا ہوتا ہے۔ پرہیز جلالی میں وہ تمام اشیا بیان کر دی گئیں جو اس جملہ کی شرائط کو پورہ کرتی ہیں۔ اس سے کہیں بہتر تھا کہ مختلف چیزوں کا نام رٹوانے کی بجائے ایک اصولی کلیہ بیان کر دیا جاتا۔ اور یہ کلیہ ہر کتاب سحر میں مزکور ہے لیکن نقال اردو مترجمین نے اس میں تحریف کر کے مخلوقِ خدا کو گمراہ کیا۔ میں نے مترجمین کا لفظ اسلئے لکھا کہ جن عملیات کا یہ خود کو عامل بتاتے ہیں یہ تمام عملیات انہوں نے عرب اور ایران کی کتب سے نقل کر کے لکھے ہیں، اور اگر آپ مستند کتب کا مطالعہ کریں تو یہ حقائق آپ کو وہاں مل جایئں گے۔
روح کے اخراج سے مراد اینمل پروڈکٹس ہیں۔ یعنی وہ تمام اشیاء جن کا ماخذ حیوانات ہیں کہ جانوروں میں روحِ حیوانی موجود ہے، اور بو سے مراد بدبودار اشیاء ہیں۔
اب یہاں علویات اور سفلیات کا بھی فرق سمجھ لیں، سفلی عمل میں آپ جانور کی سواری بھی نہیں کر سکتے اور جانور کو ذبح بھی نہیں کر سکتے، لیکن اسلامی عملیات میں آپ یہ دونوں کام کر سکتے ہیں۔ سفلی عملیات میں شراب اور دیگر نشہ آور اشیاء ممنوع نہیں لیکن اسلامی عملیات میں ممنوع ہیں۔ یعنی اگر سفلی عملیات اور سحر کرنا ہو تو یہی جملہ کسوٹی ہے اور جب قرآنی عملیات کرنا ہوں تو اس جملہ کے ساتھ شریعت کے حلال حرام کا بھی خیال رکھا جائے گا۔
مثال کے طور پہ صوم روحانی کی رو سے عملیات میں شراب جائز ہے لیکن علوی عملیات میں ممنوع ہو گی حالاںکہ شراب میں بھی بو موجود ہے لیکن سفلیات میں ہر غلط کام اجابت کا ذریعہ ہے۔ جیسا کہ سفلیات میں صومِ روحانی میں پاکی نہیں کر سکتے لیکن قرآنی عملیات میں ضرور کریں۔ نہ کرنے کی صورت میں کامیابی کی توقع عبث ہے، حالاںکہ کاش البرنی نے پاکی سے بھی منع کیا لیکن یہ شرط صرف سفلیات کیلیئے ہے علویات کیلیے بالکل نہیں۔
اب اگر اس جملہ کی تشریح کی جائے تو
گوشت، انڈہ، مچھلی، دیسی گھی، لسی، دہی، دودھ، لہسن، پیاز وغیرہ وغیرہ ہی سے پرہیز مقصود ہے۔
اور اگر لہسن یا پیاز کو اچھی طرح پکا لیا جائے تو کھایا جا سکتا ہے۔
اور یہ جو اردو کتب میں لکھا ہے کہ پھل استعمال نہ کیے جائیں کیوںکہ پھلوں پہ مکھیاں بیٹھتی ہیں بالکل غلط ہے۔ ہر طرح کے پھلوں کا استعمال بالکل درست ہے۔
اب میرا ذاتی طریقہ اور تجربہ یہ ہے کہ میں قرآنی عمل میں شرعی روزہ سے کام لیتا ہوں اور سب کچھ کھانا جائز مانتا ہوں کیوںکہ اس ریاضت کا بنیادی مقصد ضبطِ نفس ہے، اور
ضبطِ نفس کیلیے شرعی روزہ سے بڑھ کر کوئی چیز نہیں اسلیے میرے نزدیک شرعی روزہ یہ جملہ تمام مقصد پورہ کر دیتا ہے اور قربِ الٰہی کی وجہ ہونے سے قرآنی عمل جلد اجابت ظاہر کرتا ہے ۔ دیگر بھائی اگر پرہیز کرنا چاہیں تو صوم روحانی کر سکتے ہیں۔ اور اگر بہت زیادہ اثر مطلوب ہو تو شرعی روزہ اور روحانی روزہ دونوں سے کام لیا جائے یعنی صوم روحانی اور صومِ شرعی دونوں کر لیے جائیں یعنی سحر و افطار میں صرف وہ اشیاء کھائیں جو صومِ روحانی کی رو سے کھانا جائیز ہوں۔

11 comments:

  1. oh hazrat bahut bahut sukhriya app ne asi bat likhi hai jo koi amliyat ke kisi bhi kitab main milna muskil he agar ham perhehz jamali wa jalali kare bhi jo ke amliya ki kitab main likha howa hai to janab phir bhi mon main bas paeda ho hi jati hai to ye sab tamasha kar
    ne ki kaya matlab howa aur agar gosht se perhaz hi karna hai to isse kaya milne wala
    koi bhi nabi aesa nahi jisne gosht na khaya ho to kaya inke pas jibrail amin nahi aye aur kaya jibrail amin ne unse kha ki app ne gosht khya hai main app se bat nahi kar sakta aur kaya kisi sahabi se yae bat sabit hai aur kaya kisi wali ne ye kha ki perhez jamali wa jali karo
    hazrat shekh abdul kadar ji lani (rh) ki khid mat main hazaron mokil raha karte the app kohd farmate hai ki main jab chota tha to madarsa jaya karta tha to mere aird gird fariste chala karte the aur jab main masjid main baetha karta to farishte kaha karte ki hato allah ke ke wali ko jaga do to kaya wo koi perhez kiya kar te the
    hain mo ki bas zaror hadees se sabit hai magar janab agar mo ki bas ka hi sawal hai to bazar main dat saf karne ke bahoy sare past milte hai to yeh amil ye kion nahi kahte ki falane past se dat saf kro seri mo ki bas chale jai gi
    hadees main likha hai ki agar miswak kare bad agar namaz padhi jae to to woh bagaer miswak ki namaz se 70 gonha zaya sawab rhkti hai to janab sawal mo saf karne ka hai na ki perhehz jamali wa jamali kar ne ka to mo to past aur miswak se bhi saf hojata hai to perhez kar ne ki kaya zarurat
    pora comment padne ke liye shukriye mojhe laga app pora nahi apd paege

    ReplyDelete
  2. paikar e basafa, assalam o alaikum wa rahmatullah,
    huzoor in short saum e sharee to roza (fast) huwa aur saumey roohani wo parhaiz jis mien rooh aur boo hey,,,,,,,,,,,,,esa hi farmaya na apney?
    talib e nazar (isaqiali@gmail.com)

    ReplyDelete
  3. حياك الله يا أخي و الله كلماتك موجعة و مؤلمة.

    ReplyDelete
  4. Reply To Saqi Ali:
    ji han un tamam ashiya se parhez jin ka makhaz rooh e hewani he ya badboo dar sahiya. som e roohani pe me ek mazid tyafsili post bhi likh doon ga.

    ReplyDelete
  5. Reply To Request:
    اخی الغالی قد تكون الكلمات موجعة و مؤلمة

    و لكن هي الحقيقة۔ شکرالک وبارک اللہ فیک.

    ReplyDelete
  6. Reply To Haris:
    mohtram ap ne post ko baghor nahi parha, me ne wazeh likha he ke som e roohani bible se sabit he...
    jahan tak badboo dar ashiya ka taluq he to byan kar diya ke lehson or piyaz achi tarah paka liy jain to kha sakty hain...
    or jahan tak ap ka kehna he ke kisi nabi ne esa parhez nahi kia ap ghalti par hain... Islam se qabl roza ki yahi kefiyat thi, Hazrat Eesa A.I ne som e roohani se kam lia or maximum 40 yom ka roza bible se sabit he. aj bhi Christians som e roohani se kam lety hain qk unky nazdik asal roza yahi he or yahi uski asal kefiyat he.
    jabke ham Muslims ke nazdik asal roza woh he jo shariyat e Muhammdia se sabit he or Islam ke a jany ke bad som e roohani mansookh ho gya, lihaza ab agar koi som e roohani se kam leta he or kisi bhi khas chiz ka parhez karta he to usay zabt e nafs ka faida to ho sakta he lekin qurb e ilahai naseeb nahi ho sakta qk ab ye roza mansookh ho chuka. us waqt ke dor me jo log som e roohani se kam lety thy unhain zabt e nafs, qurb e Ilahi or sawab dono naseeb hoty thay qk tab ye hukm e Ilahi tha ab ye hukm e ilahi nahi.
    uloom e roohani bahot qadeem hain, us waqt ke amlin som e roohani se kam lety or kamyab bhi hoty thay qk unhain dohra faida tha, zabt e nafs bhi or qurb e ilahi bhi,, lekin aj ek Muslman jab amliat se maqasid ka hal chahta he to qurani amal me ya to siray se parhez karta hi nahi ya phir som e roohani se kam leta he or faida nahi utha pata, qk amal ho qurani or amil bible ya Torah ke tariqy pe chal raha ho to kesy kamyab ho? isliy qurani amliat me som e islami hi kamyabi ka zamin he na ke som e masiheen yeni som e roohani. yahi mera tareeqa he or yahi mera mamool. agar kisi ko islamic roza ki afadiyat me shuba ho to woh beshak basad shoq som e roohani se kam le, lekin qurani amal me faida tabhi hoga jab som e roohani ke sath som e islami bhi follow kia jay, sehr or talismat ke amliat me som e roohani hi kafi ho ga qk sifliat or sehr ka maqsad hi deen e haq se door jana he. umeed he ab ap bakhoobi samjh gay hon ge ke som e roohani koi man gharat ya kisi ke zehen ki ikhteraa nahi balke mansookh ilhami kitabon se sabit he, or choonke us waqt yahi roza tha or islam ka zahoor hua hi nahi tha isliy us waqt ke amlin isi se kam lety thy or aj muslmano ko chahiy ke qurani amliat me qurani taleemat pe amal karain na ke bible ya Torah ki talimat par.....,,,,

    ReplyDelete
  7. salam.sir kise amal ke zakat or dawat mai kya farq hai?
    kisi ayat ya ism ke dawat kaisy de jay or iska faida?
    (2)surah muzammil ke dawat kaisy de jay?

    ReplyDelete
  8. Reply To Salam:
    dawat or zakwat me bahot sary farq hain, ek to triqa e kar ka farq he, or khas tor pe kisi bhi lambi surah ki dawat ka amal to kia ja sakta he magar zakwat ada karna bahot mushkil amar he, balke ek ayat ki zakwat ada karna hi bahot mushkil kam he....
    buniyadi farq ye he ke zakwat sirf taseer ke hisool keliy ada ki jati he ke us ism ya ayat se ainda hamesha taseer ka zahoor ho lekin dawat in fact muaklat ya kisi quwat jo us ism ya ayat ke sath makhsoos hoti he usy samny hazir karny ya makhfi tor pe kisi bhi hajat ko poora karny keliy ki jati he,,, maslan agar ap kisi ism ki zakwat ada karty hain to ap na to muakil waghera ki hazri ki khwahish rakhty hain na hi koi duniavi maqsad keliy parhty hain,,, lekin dawat me ye dondo chizen ho sakti hain, maslan ap rizq ki farawani keliy bhi kisi ism maslan ism Ya Wahab ki dawat ka amal kar sakty hai, us se bas yahi hoga ke rizq ke darwazy khul jain ge,,,, lekin agar ap isi ism ki zakwat ada karty hain to phir ap is ism ko kisi bhi naqsh ya azimat ya taweez waghera me istemal karain ge to is ism ka muakil jald kam kary ga, lekin ek bar bhi gher sharai kam lia to phir umar bahr keliy taseer khtam ho jay gi,,, hata ke agar ap doobara bhi zakwat ada karai tab bhi taseer zahir nahi ho gi,,, shetani isma ki bat or he un me gher sharai afaal me kam lia ja sakta he.....

    ReplyDelete
  9. اخی الکریم عمر حياك الله اتمنى ان ترسل لي طريقة زجر القرين۔

    ReplyDelete
  10. umer sahab aap ne farmaya tha k perhaiz jalali jamli kuch bhi nai bus sharai mamnooaat hain laikin som roohani ka aap ne hawala diya aurkaha k doodh dahi anda gosht etc mana hai kitaabon main bhi yehi cheezain perhaiz jalali jamali batyi gaye hain ab islami amal main yeh zaroori hai k doodh dahi anda etc ko tarq kar diya jae ya phir sirf sharai mamnooat se perhaiz kiya jae baaqi sab kuch jaaiz hai maslan doodh gosht etc islami amal main jaaiz hain

    ReplyDelete
  11. aur 21 days waley amal man jo aap ne agarbatti banana batye thi wo teeli k saath chipak nai rahi ????koi aur method matlab safed mossli ko grand kr k qalmi shoray wale pani main mix karna hai ??/

    ReplyDelete